Kashmir on protest


Advertisements

Contours of debt trap


THIS refers to the news report ‘Trade deficit surges to all-time high’ (April 12). The trade deficit has already crossed the $23bn mark during July-March and expected to exceed $30bn by June, which is forcing the government to seek fresh borrowings from other sources to meet its import requirements, as well as debt service obligations.

The reserves have declined from the peak of $24.5bn in early October 2016 to $21.5bn as of now, with falling exports, increasing imports and the resultant enlarged current account deficit expected at about $6bn. Further erosion in reserves in the subsequent months looks certain as the improvement is not foreseen in the performance of external trade.

The above scenario demonstrates that the country is into a serious debt trap. Debt trap is a situation in which a debt is difficult or impossible to repay, the borrower is sucked into obtaining fresh debt to pay old debt and a vicious cycle is created from which there is no exit.

Pakistan’s external debt stands at $75bn while its exports are $20bn. This means its external debt is almost four times that of exports. Bangladesh’s external debt is just 1.2 times its exports.

The bottom line is that the nation is close to financial insolvency.

North Korean Threat To USA


Donald-Trump-and-Kim-Jong-un-564288
North korean leader Kim Jong Un salutes during a visit to the Ministry of the People’s Armed Forces on the occasion of the new year, in this undated photo released by North Korea’s Korean Central News Agency (KCNA) on January 10, 2016.

South Korea said on Sunday North Korea’s latest missile launch threatened the entire world, warning of a punitive action if it leads to further provocations such as a nuclear test or a long-range missile launch.

"North Korea showing a variety of offensive missiles at yesterday’s military parade and daring to fire a ballistic missile today is a show of force that threatens the whole world,” South Korea’s Foreign Ministry said in a statement.

nintchdbpict000315282616

A North Korean missile "blew up almost immediately” on its test launch on Sunday, the U.S. Pacific Command said, hours before U.S. Vice President Mike Pence was due in South Korea for talks on the North’s increasingly defiant arms program.

syria

North Korean Threat To USA


Donald-Trump-and-Kim-Jong-un-564288
North Korean leader Kim Jong Un salutes during a visit to the Ministry of the People’s Armed Forces on the occasion of the new year, in this undated photo released by North Korea’s Korean Central News Agency (KCNA) on January 10, 2016.

South Korea said on Sunday North Korea’s latest missile launch threatened the entire world, warning of a punitive action if it leads to further provocations such as a nuclear test or a long-range missile launch.

"North Korea showing a variety of offensive missiles at yesterday’s military parade and daring to fire a ballistic missile today is a show of force that threatens the whole world,” South Korea’s Foreign Ministry said in a statement.

nintchdbpict000315282616

A North Korean missile "blew up almost immediately” on its test launch on Sunday, the U.S. Pacific Command said, hours before U.S. Vice President Mike Pence was due in South Korea for talks on the North’s increasingly defiant arms program.

syria

US Tests “Gravity Bomb” Nuclear Delivery System


In the latest example of American saber-rattling, an old nuclear weapon is getting a makeover … one that’s costing taxpayers an estimated $11 billion.

The United States National Nuclear Security Administration (NNSA) and the U.S. Air Force (USAF) announced the successful completion of the first “qualification flight test” for the B61-12 nuclear “gravity bomb” this week.

“The non-nuclear test assembly was dropped from an F-16 based at Nellis Air Force Base,” a release from the agency noted.  “The test evaluated both the weapon’s non-nuclear functions as well as the aircraft’s capability to deliver the weapon.”

Did it work?  Apparently …

“This demonstration of effective end-to-end system performance in a realistic ballistic flight environment marks another on-time achievement for the B61-12 Life Extension Program,” said brigadier general Michael Lutton. “The successful test provides critical qualification data to validate that the baseline design meets military requirements. It reflects the nation’s continued commitment to our national security and that of our allies and partners.”

The B61 is a staple of the American nuclear arsenal – with more than 3,100 such weapons produced over the last fifty years.  An estimated 1,300 remain in service.  The B61-12 life extension program intends to consolidate and replace four different variants of this weapon, with its “first production unit” slated for delivery in March of 2020.

The weapon is twelve-feet long, weighs between 700-800 pounds, is accurate to thirty meters and has a blast yield of fifty kilotons.

The B61-12 is “critical to sustaining the nation’s strategic and non-strategic air-delivered nuclear deterrent capability,” according to the NNSA – although the life extension program has been repeatedly targeted for budget cuts in recent years

Two Killers,Ready to Destroy Humanity


 

Vladimir-Putin-Donald-Trump-Nuclear-War-720585
Russia, Syria and Iran strongly warned the United States Friday against launching new strikes on Syria and called for an international investigation of the chemical weapons attack there that killed nearly 90 people.

Russian Foreign Minister Sergey Lavrov, who hosted his Iranian and Syrian counterparts in Moscow, denounced the U.S. missile strikes on Syria as a “flagrant violation” of international law. Additional such actions would entail “grave consequences not only for regional but global security,” Lavrov said.

Syrian Foreign Minister Walid Moallem said the meeting sent a “strong message” to Washington. Iran’s Mohammad Javad Zarif emphasized that the participants agreed that unilateral actions by the U.S. were unacceptable.

The U.S. accuses the Syrian government of deliberately launching the deadly chemical attack in Khan Sheikhoun on April 4. Russia has alleged that the victims were killed by toxic agents from a rebel chemical arsenal hit by Syrian war planes.

Moscow has warned against putting the blame on Damascus until an independent inquiry is conducted and vetoed a proposed U.N. resolution on the attack, saying it failed to mention the need to inspect the affected area.

Lavrov on Friday expressed skepticism about a preliminary investigation conducted by the U.N.’s chemical weapons watchdog. He alleged that its experts failed to visit the site and said it was unclear to Russia where evidence was taken and how it was

In Russia’s view, the probe conducted by the Organization for the Prohibition of Chemical Weapons should be widened to include experts from many nations, he said.

“If our U.S. colleagues and some European nations believe that their version is right, they have no reason to fear the creation of such an independent group,” Lavrov added. “The investigation into this high-profile incident must be transparent and leave no doubt that someone is trying to hide something.”

Lavrov said the U.S. strike on the Syrian base has undermined peace efforts in Syria and reflected Washington’s focus on ousting Syrian President Bashar Assad’s government.

The three ministers also discussed the beefing up of U.S. forces on Jordan’s border with Syria, Moallem said. He added that Russia, Iran and Syria have “common procedures against any aggression,” but wouldn’t offer specifics.

Lavrov said Moscow has asked Washington about the purpose of the buildup and received assurances that the U.S. troops were deployed there to cut supply lines between the Islamic State group factions in Syria and Iraq.

Russia has staunchly backed Assad’s government throughout Syria’s six-year civil war. It has conducted an air campaign in Syria since September 2015, saving Assad’s government from imminent collapse and helping to reverse the Syrian military’s fortunes.

تحریک آزادی کشمیر کا نیاپن،بھارتی ناکامی کا پیش خیمہ


black-day-observed-to-condemn-indian-troops-brutality-in-kashmir-920e6a72500a9d7f1b5439dd9fad7d02
مسئلہ کشمیر دو چار برس کی بات نہیں ہے یہ نصف صدی پر محیط کشمکش کا سفر ہے،اس سفر میں کشمیریوں نے آزادی کی تحریک شروع کی تو ہزاروں شہداء کی صورت میں بھارتی فوج کی طرف سے تحفہ ملا،کشمیر بھارت کو اپنا اٹوٹ انگ قراردیتا ہے تو پاکستان کیلئے شہہ رگ ہے،شہہ رگ کے بغیر کوئی جاندار زندہ نہیں رہ سکتا پاکستان اپنی شہہ رگ کو کبھی تنہا نہیں چھوڑے گا،پاکستان نے اپنے موقف میں لچک بھی دکھائی لیکن بھارت کی طرف سے ایک انچ بھی تبدیلی نہ آئی،کشمیر میں کچھ عرصہ آزادی کی تحریک کی شدت میں کمی ضرور آئی لیکن ختم نہیں ہوئی،حالیہ دنوں میں آزادی کی تحریک عروج پر ہے،کشمیریوں کو اپنے ساتھ رکھنے کی ہر بھارتی تدبیر ناکام ہورہی ہے،کشمیر یوں نے اعلانیہ پاکستانی پرچم لہرانے اور ترانے بجانا شروع کردیے ہیں،بھارتی فوج کی مزاحمت میں پتھر لے کر گلی محلوں میں اپنی بقاء کی جنگ لڑ رہے ہیں،حال میں بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے وادی کا دورہ کیا تو منہ کی کھانا پڑی،ریاستی انتخابات کا ڈرامہ رچایا تو فلاپ ہوگیا،بھارتی ٹی وی کے مطابق ٹرن آؤٹ تیس سالہ تاریخ میں سب سے کم 6فیصد رہا جس کے باعث بھارت کو یہ انتخابات منسوخ کرنا پڑے۔
پاکستان جتنا بھی کشمیر کے مسئلے کو حل کرنے کی طرف بڑھتا ہے بھارت اسی رفتار سے دور بھاگنے کی کوشش کرتا ہے،پاکستان کا موقف ہے کہ مسئلہ کشمیر کو حل کیے بغیر مذاکرات کا معاملہ آگے نہیں بڑھ سکتا۔یہ حقیقت ہے کہ مسئلہ کشمیر کے حل سے خطے کے بہت سارے مسائل خود بخودسدھر جائینگے،خطے کا امن کشمیر کے امن سے وابستہ ہے،کیونکہ کشمیر کی جغرافیائی حیثیت تین ایٹمی طاقتوں،چین پاکستان اور بھارت کیلئے اہم ہے،اسی فوجی،سیاسی اہمیت کے پیش نظر بھارت کشمیر پر سے قبضہ چھوڑنے پر تیار نہیں۔
بھارت ہمیشہ کشمیر کو اپنا اٹوٹ انگ قرار دیتا آیا ہے۔بھارت کہتا ہے کہ پہلے دہشتگردی اور دوسرے مسائل بارے بات کرو اس کے بعد کشمیرکا معاملہ دیکھا جائیگا،کشمیر کو وہ متنازعہ علاقہ تسلیم ہی نہیں کرتا،حالانکہ بھارتی حکومت 1948ء میں خود اس مسئلے کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں اٹھاکر کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق مسئلے کو حل کرنے کا وعدہ کرچکی ہے،اقوام متحدہ کی قرارداد کے بعد بھارتی اٹوٹ انگ کے دعوے کی کوئی حیثیت نہیں رہتی۔بھارت کشمیر میں جاری جدوجہد آزادی کی کوششوں کو بھی دہشتگردی کے کھاتے میں ڈالتا ہے،اس کا خیال ہے کہ وہاں برسر پیکار تنظمیں دہشتگرد ہیں،مان لیا یہ دہشتگرد ہیں تو اس کی وجہ بھی تو خود بھارت ہی ہے جس کی ’’میں نہ مانوں‘‘کی پالیسی نے کشمیری نوجوانوں کو اسلحہ اٹھانے پر مجبور کیا،کسی بھی جگہ امن نہ ہو تو تجارتی،ثقافتی اور دیگرتعلقات کی باتیں بے معنی ہوجاتی ہیں کاش!یہ سب بھارت سمجھ سکتا۔
اگر پاکستان کی کشمیر اور خطے میں امن کوششوں کا جائزہ لیا جائے تو پاکستان نے ہر دور میں امن کیلئے پہل کی ہے۔پاکستان نے مسئلہ کشمیر کو دنیا کے ہر فورم پر اٹھایا ہے،سارک سے لے کر اقوام متحدہ تک اس مسئلے کو لے کر گیا ہے،پاکستان کی اس حوالے سے پالیسی مسقل رہی ہے لیکن حل کرنے کے فارمولے تبدیل ہوتے رہے ہیں۔ ساٹھ کی دہائی میں صدر مملکت ایوب خان نے اس مسئلے کو حل کروانے کیلئے امریکی صدر جان ایف کینڈی سے بھی مدد مانگی۔صدر ایوب کے بعد شہید ذوالفقار علی بھٹو بھی اس مسئلے کو حل کرنے میں پیش پیش رہے،او آئی سی کا وجود عمل میں آیا تو اس کے اجلاس میں بھی قراداد لائی گئی،جنرل ضیاء الحق شہید اور پیپلز پارٹی کے دوسرے دور حکومت میں بھی مسئلے کے حل کیلئے مختلف تجاویز پیش کی گئیں۔ کارگل میں پاک بھارت جنگ اور نائن الیون کے واقعہ کے بعد صورتحال یکسر تبدیل ہوگئی لیکن کشمیر کے حوالے سے پاکستان کی سیاسی حمایت میں کوئی کمی نہ آئی،جولائی 2001ء میں پاکستانی صدر پرویز مشرف نے بھارت کا دورہ کیا اور آگرہ میں اپنا چار نکاتی فارمولا پیش کیا۔مشرف فارمولا میں کہا گیا کہ کشمیر کو ایک منازعہ علاقہ قرار دے کر اس پر مذاکرات کا آغاز کیا جائے،غیر عملی حل کو چھوڑ دیا جائے اور اصلی حل کی جانب بڑھا جائے۔بھارت اس وقت بھی اعلامیہ پر دستخط کرنے سے مکر گیا۔پھر 2006ء میں جنرل پرویز مشرف نے ایک اور چار نکاتی حل پیش کیا جس میں کہا گیا کہ علاقے کو غیر فوجی علاقہ قرار دیکر مقامی حکومت بنائی جائے،کوئی نئی حد بندی نہ کی جائے ،پاکستان اور بھارت کی باہمی انتظامیہ مقرر کی جائے۔بھارت اس حل کی طر ف بھی نہ آیا۔اس کے بعد پیپلز پارٹی کی حکومت نے بھی اپنے تئیں حل کی کوشش کی ،صدر زرداری نے اقوام متحدہ اور امریکی نمائندوں سے ملاقات میں بھی کشمیر کو خطے کا سب سے بڑا مسئلہ قرار دیا۔2013ء میں نوازلیگ نے حکومت سنبھالی تووزیراعظم میاں محمد نوازشریف نے پہلا کام بھارتی ہم منصب نریندر مودی کی تقریب حلف برداری میں جاکر امن کا پیغام دیا،وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف نے اقوام متحدہ کے اجلاس میں خطاب کے دوران مسئلہ کشمیر کا حل نہ ہونا اقوام عالم کی ناکامی قرار دیا۔ پاکستان کی بھارت سے تعلقات کے حوالے سے نیت صاف ہے لیکن بھارت پاکستان کی طرف سے بھیجے گئے پھولوں کا جواب ہمیشہ نفرت اور توپوں کے گولوں سے دیتا آیا ہے۔
140516160448_nirender-modi
بھارت نے ہمیشہ پاکستان کو نیچا دکھانے کیلئے کوششیں کی ہیں،جہاں بھی اس کا بس چلا اس نے پاک سرزمین کیخلاف زہر افشانی کی ہے،حقیقت یہ ہے کہ بھارتی ذہن نے ابھی تک پاکستان کے وجود کو تسلیم ہی نہیں کیا،پاکستان اور چین کے مابین جب سے معاشی اور سٹریٹجک قربتیں بڑہی ہیں ،بھارتی حکومت ،پالیسی میکرز کو یہ بات ہضم نہیں ہورہیں،بلکہ یہ کہیں کہ ہیضہ ہوگیا ہے،بھارت چاہتا ہے کہ پاکستان کے زیر کنٹرول علاقہ کو اپنا حصہ ظاہر کرکے منصوبے کو شروع ہونے سے پہلے ہی رکوا دیا جائے ۔بھارت چور مچائے شور والی پالیسی پر عمل پیرا ہے،کہ اتنا شور مچایا جائے کہ بھارت کے زیر قبضہ علاقوں اور وہاں جاری آزادی کی تحریکوں کی طرف دنیا کا دھیان ہی نہ جانے پائے۔بھارتی حکومت نے پاکستان اور چین کے مابین عدم اعتماد کی فضاء قائم کرنے کیلئے اپنی خفیہ ایجنسی را کو ہدف دے دیا ہے جس کے اثرات پاکستان میں محسوس بھی کیے جا رہے ہیں،بلوچستان سے بھارتی ایجنسی را کے ایجنٹوں کا پکڑا جانا پاکستانی کی سلامتی پر بھارت کا وار ہے جو ناقابل معافی جرم ہے،بھارت مسئلہ کشمیر کو حل کرنے کے بجائے افغانستان سے مل کر پاکستان میں پراکسی وار شروع کے ہوئے ہے،بھارت کبھی بھی نہیں چاہے گا کہ چین اقتصادی راہداری کے ذریعے افغانستان یا سنٹرل ایشیا کی ریاستوں تک پہنچے،بھارت کے اس منصوبے کا اعتراف بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو نے بھی کیا ہے،اس کے اسی اعتراف کے جرم میں ملٹری کورٹس نے سزا بھی سنائی ہے جس پر بھارت دنیا بھر میں واویلا مچا رہا ہے،سزا پر عمل کرنے کی صورت میں سخت نتائج کی دھمکیاں بھی دے رہا ہے،بھارت کی یہ خام خیالی ہے کہ وہ پاکستان او ر چین کو ترقی سے روک پائے گا۔

ّبھارتی حکمران یہ بات اپنے ذہن میں رکھیں کہ پاکستان معاشی لحاظ پیچھے ضرور ہے لیکن اتنا ہی کمزور نہیں کہ نوالہ سمجھ کر چبا لیا جائے۔پاکستان نے تو دنیا کو پرامن بنانے کیلئے ساٹھ ہزار سے زائد قربانیاں دی ہیں،اقوام متحدہ کے ہر امن مشن کا پاک فوج حصہ ہے،دنیا میں جہاں بھی ظلم کی بات ہوتی ہے پاکستان اس کی مذمت کرنے میں پیش پیش ہوتا ہے،بھارت نے تو خود اپنے ملک میں گاؤ ماتا کی پوجا کے نام پر الاؤ جلا رکھے ہیں،تمام اقلیتیں نام نہاد سیکولر جمہوری نظام سے تنگ ہیں،روزانہ نفرت کے نام پر قتل کیے جانیوالوں کی خبریں ملتی ہیں،بھارت کو پاکستان کی فکر چھوڑ کراپنے وطن کی فکر کرنی چاہیے،اپنا وجود بر قرار رکھنے کیلئے اپنے عوام کو رام کرے نہ کہ ہمسایوں کے سینگوں میں سینگ ڈالتا پچرے۔
کشمیر کو اٹوٹ انگ کہنے سے یہ انگ بھارت کا تھوڑا ہی ہوجائے گا،جنگ جنگ کرنے سے کہیں ایسا نہ ہو کہ بھارت کا انگ انگ ہی نہ ٹوٹ جائے،کالے کوے کو سفید کہنے سے سفید نہیں ہوجاتا

Trump Plan


trump_ceos_80017.jpg-620x412

US President Donald Trump said Tuesday that the United States is ready to solve the North Korean “problem” without China if necessary.

“North Korea is looking for trouble,” Trump wrote on Twitter. “If China decides to help, that would be great. If not, we will solve the problem without them! USA.”

Trump launched a missile strike on Syria late Thursday while meeting with Chinese leader Xi Jinping at his Mar-a-Lago resort in Florida.

The move was widely interpreted as a warning to North Korea as well as retaliation for the Damascus regime’s suspected sarin attack against civilians in a rebel-held town in Syria.

“I explained to the President of China that a trade deal with the US will be far better for them if they solve the North Korean problem!” Trump wrote in an earlier tweet.

The United States has deployed a naval strike group ─ which includes the Nimitz-class aircraft carrier USS Carl Vinson ─ to the Korean peninsula in a show of force.

Trump has previously threatened unilateral action against Pyongyang if China, the North’s sole major ally, fails to help curb its neighbor’s nuclear ambitions.

Panama Case in Freezer


1948076_707738605935590_610260792_n

Islamabad(anam khan)Panama case decion is pending after long hearing in supreme court.People of Pakistan and politicians worried about it,it becomes dilema.On social media people criticizing judiaciary and judges,why are taking late,why freezing? but decision will change direction of politics.